1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

اردن، اب زیادہ شامی مہاجر بچے اسکول جا سکیں گے

اردن نے شامی مہاجر بچوں کی تعلیم تک رسائی کو ممکن بنانے کے لیے اہم اقدامات اٹھائیں ہیں، جن کی ہیومن رائٹس واچ نے تعریف کی ہے۔ اب آئندہ تعلیمی سال زیادہ شامی مہاجر بچے اسکول جا سکیں گے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے اردن کے حکام کے حوالے سے بتایا ہے کہ اسکولوں کو ہدایات جاری کر دی گئی ہیں کہ وہ شامی مہاجر بچوں کے اسکولوں میں داخلے کو ممکن بنانے کے لیے فوری اقدامات اٹھائیں۔

DW.COM

حکومتی ترجمان محمد مومنی بتایا ہے کہ ستمبر سے قبل اردن میں ایسے پناہ گزین شامی بچے بھی اسکولوں میں داخلہ حاصل کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے، جن کی ضروری کاغذی کارروائی مکمل نہیں ہے۔

مومنی نے اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ آئندہ تعلیمی سال یعنی ستمبر سے قبل شامی بچوں کو اسکولوں میں داخلے کے حوالے سے درپیش مشکلات کو دور کر لیا جائے گا۔ انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیم ہیومن رائٹس واچ نے اس پیشرفت کو ایک بڑٰی کامیابی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اردن کی حکومت کی طرف سے ان اقدامات کے نتیجے میں ہزاروں مہاجر بچے تعلیم حاصل کرنے کے قابل ہو جائیں گے۔

مومنی نے مزید کہا کہ 102 سرکاری اسکولوں میں ڈبل شفٹس شروع کی جا رہی ہیں، جس کی وجہ سے پچاس ہزار شامی بچے اسکول میں داخلہ حاصل کرنے میں کامیاب ہوجائیں گے۔ بائیس اگست بروز پیر اردن نے یہ اعلان بھی کیا ہے کہ آٹھ تا بارہ سال کی عمر کے پچیس ہزار ایسے مہاجر بچوں کے لیے خصوصی کلاسز کا اہتمام بھی کیا جائے گا، جو گزشتہ تین یا اس سے زائد برسوں سے اسکول جانے سے قاصر ہیں۔

شامی مہاجر بچوں کے لیے ان تعلیمی منصوبہ جات کے لیے امریکا، برطانیہ، ناروے اور سوئٹزرلینڈ نے سو ملین یورو کا ایک فنڈ بنایا ہے۔ ہیومن رائٹس واچ سے وابستہ محقق بل فان ایسویلڈ نے ان منصوبہ جات کو انتہائی اہم قرار دیا ہے۔ انہوں نے کہا، ’’اردن کی وزارت تعلیم کی طرف سے ایسے شامی مہاجر بچوں کو اسکول میں داخلہ فراہم کرنا اہم پیشرفت ہے، جن کے پاس مطلوبہ دستاویزات نہیں ہیں۔‘‘

قبل ازیں ہیومن رائٹس واچ نے اردن پر زور دیا تھا کہ وہ مہاجر بچوں کی اسکولوں تک رسائی ممکن بنانے کے لیے اپنے ملکی قواعد وضوابط میں تبدیلی لائے۔ پرانے قوانین کے مطابق ایسے مہاجر بچوں کو اسکول میں جگہ نہیں مل سکتی تھی، جو تین برس یا اس سے زائد عرصے سے کسی اسکول میں رجسٹر نہیں تھے۔

Jordanien Irbid Schülerinnen in blauen Uniformen essen Brot

آئندہ تعلیمی سال زیادہ شامی مہاجر بچے اسکول جا سکیں گے

Schulunterricht für syrische Kinder

اسّی ہزار شامی مہاجر بچے گزشتہ برس اسکول میں داخلہ نہیں لے سکے تھے

Flüchtling Camp Lager Kind Schule Unterricht lachen Al Zaatri Jordanien

اردن میں دو لاکھ چھبیس ہزار ایسے شامی بچے رجسٹر ہیں، جن کی عمریں اسکول جانے والی ہیں

علاوہ ازیں اردن میں رہائش پذیر ایسے مہاجر بچوں کو بھی اسکول میں رجسٹر نہیں کیا جاتا تھا، جن کے پاس خصوصی ’سروس کارڈز‘ نہیں ہوتے تھے۔ یہ امر اہم ہے کہ ایسے مہاجرین جو جولائی سن 2014 میں عارضی پناہ گاہوں کو باقاعدہ طریقے سے چھوڑ چکے ہیں، انہیں مزید ایسے کارڈز جاری نہیں کیے جاتے۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کے اعداد و شمار کے مطابق اردن میں مجموعی طور پر دو لاکھ چھبیس ہزار ایسے بچے رجسٹر ہیں، جن کی عمریں اسکول جانے والی ہیں۔ تاہم ان میں سے اسّی ہزار بچے گزشتہ برس اسکول میں رجسٹر نہیں ہو سکے تھے۔

عالمی ادارہ برائے مہاجرین کے مطابق شام میں خانہ جنگی سے قبل وہاں 22.4 ملین نفوس آباد تھے، جن میں سے 4.8 ملین تشدد اور شورش کے باعث ملک سے فرار ہو چکے ہیں جبکہ 8.7 ملین افراد شام کے اندر بھی بے گھری کا شکار ہیں۔