1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اتر پردیش کے وزیر اعلیٰ متنازعہ ہندو رہنما ادتیاناتھ ہوں گے

وزیر اعظم مودی کی ہندو قوم پسند جماعت نے بھارت کے سب سے زیادہ آبادی والے صوبے اتر پردیش کے نئے وزیر اعلیٰ کے طور پر متنازعہ شعلہ بیان ہندو رہنما یوگی ادتیاناتھ کو منتخب کر لیا ہے، جو اتوار انیس مارچ کو حلف اٹھا لیں گے۔

Indien Ghaziabad BJP MPs Yogi Adityanath (C) General VK Singh and Satyapal Singh during (Imago/Hindustan Times/S. Ali)

اتر پردیش میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے چند مرکزی رہنما، یوگی ادتیاناتھ درمیان میں مائیکروفون پکڑے ہوئے

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی سے ہفتہ اٹھارہ مارچ کی شام ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں میں بتایا گیا ہے کہ نریندر مودی کی دائیں بازو کی طرف جھکاؤ رکھنے والی ہندو قوم پسند جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی نے گزشتہ ہفتے ملک کی سب سے زیادہ آبادی والی ریاست اتر پردیش میں کرائے گئے جو پارلیمانی الیکشن جیت لیے تھے، ان کے بعد اس پارٹی کے لیے یہ ایک کافی متنازعہ مسئلہ تھا کہ صوبائی حکومت کی سربراہی کے لیے پارٹی کے کس رہنما کو منتخب کیا جائے۔

اتر پردیش کی آبادی 220 ملین کے قریب ہے اور وہاں دیکھے جانے والے سیاسی رجحانات کو ماہرین بھارتی سیاست میں نظر آنے والے قومی رجحانات کا اشارہ قرار دیتے ہیں۔ اتر پردیش میں نریندر مودی کی پارٹی بی جے پی قطعی اکثریت حاصل کرنے میں کامیاب رہی تھی۔

بھارتی ریاستی انتخابات، مودی کی جماعت کی بڑی کامیابیاں متوقع

نریندر مودی کی پالیسیوں کا کڑا امتحان، اترپردیش کا الیکشن

اس حوالے سے ریاستی دارالحکومت لکھنؤ میں آج ہفتے کے روز پارٹی کے نومنتخب اراکین اسمبلی کے ایک کئی گھنٹوں تک جاری رہنے والے اجلاس کے بعد بی جے پی کے سینیئر رہنما ایم وینکائیا نائیڈو نے اعلان کیا، ’’44 سالہ یوگی ادتیاناتھ اتر پردیش کے اگلے وزیر اعلیٰ ہوں گے اور وہ کل اتوار انیس مارچ کو ریاستی سربراہ حکومت کے طور پر اپنے عہدے کا حلف اٹھا لیں گے۔‘‘

Indien - Hindu-Nationalisten - Wahlen (Reuters/A. Abibi)

اتر پردیش میں اپنی پارٹی کو ملنے والی قطعی اکثریت پر خوشی سے فتح کا نشان بناتے ہوئےبی جے پی کے صدر امیت شاہ

اے ایف پی کے مطابق وینکائیا نائیڈو نے بی جے پی کے ریاستی اراکین پارلیمان کے اجلاس کے بعد لکھنؤ میں ایک پریس کانفرنس کے دوران یہ اعلان تو کر دیا کہ یو پی (اتر پردیش) کے نئے وزیر اعلیٰ ادتیاناتھ ہوں گے تاہم اس حقیقت سے کوئی انکار نہیں کہ بھارتیہ جنتا پارٹی نے اس عہدے کے لیے اپنے ایک ایسے شعلہ بیان ہندو قوم پسند رہنما کو منتخب کیا ہے، جو اپنی سوچ اور بیانات کے باعث متنازعہ بھی ہیں۔

اس اعلان سے قبل بھارتی ٹیلی وژن اداروں پر دکھائی جانے والی فوٹیج میں دیکھا جا سکتا تھا کہ کس طرح ادتیاناتھ کے انتخاب کے بعد پارٹی کارکن سخت گیر ہندو نظریات کے حامل اس سیاستدان کو، جو پارٹی کے مخصوص زعفرانی رنگ کا لباس پہنے ہوئے تھے، مٹھائیاں کھلاتے ہوئے ان کے گلے میں ہار ڈال رہے تھے۔

بی جے پی نے کامیابی کے جھنڈے گاڑ دیے

غیر ملکیوں کو بھارتی بچوں کی فروخت، بی جے پی کی رہنما گرفتار

یوگی ادتیاناتھ بھارتیہ جنتا پارٹی کی طرف سے پانچ مرتبہ پارلیمان کے رکن منتخب ہو چکے ہیں اور وہ ایک ایسے ہندو سیاسی رہنما کے طور پر مشہور ہیں، جو اپنے بہت جذباتی قوم پسندانہ بیانات کی وجہ سے جانے جاتے ہیں۔

Eid al-Adha Islamisches Opferfest in Delhi (Reuters/C. McNaughton)

یوگی ادتیاناتھ ماضی میں بھارتی مسلمانوں کے خلاف بہت سی اشتعال انگیز تقریریں کر چکے ہیں

یوگی ادتیاناتھ ماضی میں بھارتی معاشرے میں آبادی کے مختلف نسلی اور مذہبی گروپوں کے مابین واضح تقسیم کا باعث بننے والے بیانات بھی دیتے رہے ہیں۔ اے ایف پی نے لکھا ہے کہ ادتیاناتھ ماضی میں ان بھارتی مسلمانوں کے خلاف بہت سی اشتعال انگیز تقریریں بھی کر چکے ہیں، جن کا صرف اتر پردیش ہی کی آبادی میں تناسب قریب 20 فیصد بنتا ہے۔

ادتیاناتھ کی سیاسی سوچ اور اس کے متنازعہ ہونے کی ایک مثال یہ بھی ہے کہ ابھی حال ہی میں جب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کئی مسلم اکثریتی ممالک کے شہریوں کے امریکا میں داخلے پر اپنے ایک صدارتی حکم نامے کے ذریعے پابندی لگا دینے کا اعلان کیا تھا، تو یوگی ادتیاناتھ نے کہا تھا، ’’بھارت کو بھی دہشت گردی کے خلاف ایسے ہی اقدامات کی ضرورت ہے۔‘‘

یوگی ادتیاناتھ پر ماضی میں کئی مرتبہ مختلف الزامات کے تحت باقاعدہ فرد جرم بھی عائد کی جا چکی ہے اور وہ تبدیلی مذہب کے شدید مخالف ہونے کے علاوہ مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے افراد کی آپس میں شادیوں کے بھی سخت خلاف ہیں۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات