1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اتر پردیش کے ایک مندر میں بھگدڑ سے 63 افراد ہلاک

بھارتی ریاست اتر پردیش میں ایک مندر کے باہر بھگدڑ کے نتیجے میں کم از کم 63 افراد ہلاک اورمتعدد دیگر زخمی ہوگئے ہیں۔ پولیس حکام کے مطابق بھگدڑ کا یہ واقعہ اترپردیش کے علاقے پرتاپ گڑھ میں پیش آیا۔

default

زخمیوں کو نزدیکی ہسپتالوں میں داخل کیا گیا

حکام کے مطابق مرنے والے تمام بچّے اور خواتین ہیں۔ اس حادثے کے نتیجے میں زخمی ہونے والوں کو پرتاپ گڑھ اور ایک نزدیکی ضلع کے ہسپتالوں میں داخل کرایا گیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق زبردست بھیڑ بھاڑ سے مندر کا مین گیٹ منہدم ہوگیا، جس کے نتیجے میں یہ حادثہ ہوا۔

bei einer Massen-Panik mehr als 140 Hindu-Pilger ums Leben

اگست 2008ء میں ریاست پنجاب میں بھی بھگدڑ کا ایک واقعہ پیش آیا تھا

ایسی رپورٹس بھی ہیں کہ مندر میں ہندو زائرین کے لئے مفت کھانا اور برتن تقسیم کئے جا رہے تھے، جنہیں حاصل کرنے کے لئے مندر کے باہر خاصی بھیڑ جمع ہوئی تھی۔ بعض زائرین نے الزام عائد کیا کہ پولیس نے بھیڑ پر کنٹرول حاصل کرنے کے لئے لاٹھی چارج کیا، جس سے لوگ مختلف اطراف کی جانب بھاگنے پر مجبور ہوئے۔

ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل آف پولیس برج لال کے مطابق اب تک ساٹھ نعشیں نکالی جا چکی ہیں۔ برج لال نے ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ظاہر کیا۔ ضلعی پولیس سربراہ مہیش مشرا نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ تمام تریسٹھ نعشیں جائے وقوعہ سے نکالی جا چکی ہیں۔ مشرا نے بھی یہ خدشہ ظاہر کیا کہ ہلاک شدگان کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ ڈسٹرکٹ پولیس چیف مہیش مشرا نے مزید بتایا:’’مرنے والوں میں 37 بچّے اور 26 خواتین شامل ہیں۔ ہم نے یہ تمام نعشیں نکالی ہیں تاہم ہلاکتوں میں اضافہ ممکن ہے۔‘‘

Indien Massenpanik bei Hindu Tempel in Jodhpur

جودھپور میں بھی ایک مندر میں بھگدڑ کے نتیجے میں کم از کم 80 افراد مارے گئے تھے

ضلع پرتاپ گڑھ سے بھارتی پارلیمان کی رکن رَتنا سنگھ نے وفاقی پارلیمنٹ اور ملکی وزیر اعظم من موہن سنگھ سے مندر بھگدڑ واقعے میں ہلاک ہونے والوں کے خاندانوں کو فی کس پانچ پانچ لاکھ روپے دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

پرتاپ گڑھ کے اس مندر میں پوجا کے لئے کئی ہزار ہندو زائرین جمع تھے تاہم اس موقع پر سیکیورٹی کے مناسب انتظامات نہیں کئے گئے تھے۔ اس سے پہلے بھی بھارت میں متعدد مندروں کے اندر اور باہر بھگدڑ کے متعدد واقعات میں سینکڑوں افراد کی جانیں تلف ہوئی ہیں۔ ابھی ریاست گجرات اور مغربی بنگال میں بھی بھگدڑ کے ایسے ہی واقعات پیش آئے تھے۔

گزشتہ آٹھ برسوں کے دوران بھارت میں بھگدڑ کے مختلف واقعات میں اب تک آٹھ سو افراد مارے جا چکے ہیں۔ 2008ء میں بھارتی ریاستوں راجسھتان اور ہماچل پردیش کے دو مندروں میں بھگدڑ کے نتیجے میں تقریباً 380 افراد ہلاک ہوئے تھے۔ ریاست مہاراشٹر میں بھی بھگدڑ کے کئی واقعات رونما ہوئے ہیں۔

رپورٹ: گوہر نذیر گیلانی

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM