1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

’اب يہاں رہتا ہوں تو لازمی ہے کہ مدد بھی کروں‘

جرمنی ميں آنے والے حاليہ سيلابی سلسلے کے نتيجے ميں سينکڑوں مکانات تباہ ہو چکے ہيں۔ بارشوں اور سيلاب سے متاثرہ ايک شہر سمباخ بھی ہے جہاں سيلاب کے بعد صفائی ستھرائی کے کام ميں پناہ گزينوں نے مقامی لوگوں کا ساتھ ديا۔

جنوبی جرمنی ميں گزشتہ ہفتے آنے والے سيلاب کے نتيجے ميں پانچ سو مکانات اور درجنوں ديگر تنصيات تباہ ہو چکی ہيں۔ ڈسٹرکٹ ايڈمنسٹريٹر ميشائل فامولر نے بتايا ہے کہ علاقے ميں قريب دو سو پُل بھی بری طرح متاثر ہوئے ہيں اور کئی مقامات پر سڑکيں اب ناکارہ ہو چکی ہيں۔ علاقائی انتظاميہ کے اندازوں کے مطابق حاليہ بارشوں اور سيلاب کے نتيجے ميں نقصانات کا حجم قريب ايک بلين يورو ہے۔ اس دوران کم از کم پانچ افراد کے ہلاک ہونے کی بھی اطلاعات ہيں۔

سيلاب سے متاثرہ جنوبی صوبے باويريا کے چھوٹے سے شہر سمباخ ميں البتہ امدادی کاموں اور سيلابی ريلے کے گزر جانے کے بعد صفائی ستھرائی کے کاموں ميں مہاجرين بھی کافی سرگرم دکھائی ديے۔ ڈوئچے ويلے کی رپورٹر بريجيٹا شُلکے سمباخ ميں موجود تھيں اور وہ بتاتی ہيں کہ شہر کی صفائی ميں مصروف تقريباً ايک ہزار رضاکاروں ميں چاليس تارکين وطن بھی شامل تھے۔

زين قريب دس ماہ قبل شام سے سمباخ پہنچا تھا

زين قريب دس ماہ قبل شام سے سمباخ پہنچا تھا

سولہ سالہ ايک شامی مہاجر زين حسين نے بھی ان کاموں ميں بڑھ چڑھ کر حصہ ليا۔ اس نے کہا، ’’اب ميں يہاں رہتا ہوں، يہ لازمی ہے کہ ميں مدد کروں۔‘‘ زين قريب دس ماہ قبل شام سے سمباخ پہنچا تھا۔ اس نے ايک اسکول کے جِم کو صاف کرنے ميں مدد کی، جو عنقريب کھلنے ہی والا تھا۔ زين نے رضاکارانہ بنيادوں پر ان کاموں ميں حصہ لينے کا فيصلہ کيا تھا۔

ڈی ڈبليو کی بريجيٹا شُلکے بتاتی ہيں مہاجرين نے ريڈيو پر سيلاب کی خبريں سن کر مدد کرنے کا فيصلہ کيا۔ کام کرنے والوں ميں اکثريتی طور پر شامی اور سينيگالی پناہ گزين تھے اور وہ سب آس پاس کے چھوٹے شہروں سے محض مدد کے ليے سمباخ گئے تھے۔

دوسری جانب ٹوئٹر پر اپنے پيغامات ميں چند افراد نے مہاجرين کی جانب سے مدد کرنے کے عمل کو ’اشتہاری‘ اور ’معروف ہونے کا ہتھکنڈا‘ قرار ديا اور ذرائع ابلاغ پر اس بارے ميں ’جھوٹی‘ رپورٹنگ کرنے کا الزام لگايا۔ بريجيٹا شُلکے، جو موقع پر موجود تھيں، نے البتہ بتايا کہ مقامی لوگ مہاجرين کی مدد پر کافی خوش تھے۔ وہ اسے معمول کی بات سمجھتے ہيں کہ وقت پڑنے پر لوگ ايک دوسرے کے کام آئيں۔ انہوں نے بتايا، ’’جب ميں نے سمباخ کے لوگوں سے پوچھا کہ وہ مہاجرين کے مدد کرنے پر کيا رائے رکھتے ہيں، تو انہوں نے يہ کہہ کر جواب ديا کہ ہميں يہاں کوئی مہاجر نہيں صرف انسان مدد کرتے نظر آ رہے ہيں۔‘‘

کام کرنے والوں ميں اکثريتی طور پر شامی اور سينيگالی پناہ گزين تھے

کام کرنے والوں ميں اکثريتی طور پر شامی اور سينيگالی پناہ گزين تھے

ڈوئچے ويلے کی رپورٹر نے سينيگال سے تعلق رکھنے والے چند مہاجرين سے بھی بات کی جن کا کہنا تھا، ’’مدد کے ذريعے ہم خود کو معاشرے ميں ضم ہوتا ہوا محسوس کر رہے ہيں۔ بحالی کے کام ميں مدد کرنا ہماری طرف سے مقامی لوگوں کے ليے تحفہ ہے اور ہميں جگہ دينے کے ليے شکريہ کہنے کا ایک انداز ہے۔‘‘

ملتے جلتے مندرجات