اب جاپانی فوجی بھی باہر جا کر لڑیں گے، متنازعہ قانون منظور | حالات حاضرہ | DW | 19.09.2015
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اب جاپانی فوجی بھی باہر جا کر لڑیں گے، متنازعہ قانون منظور

جاپانی وزیراعظم شِنزو آبے کی حکومت کی جانب سے پارلیمنٹ میں پیش کردہ سکیورٹی بلوں کو منظور کر لیا گیا ہے۔ اب جاپانی فوجی کسی بھی دوسرے ملک میں جاری جنگی مشن میں شرکت کے لیے تعینات کیے جا سکیں گے۔

جاپانی پارلیمنٹ کے ایوانِ بالا نے آبے حکومت کے سکیورٹی بلوں کی شِق وار منظوری ہفتے کی علی الصبح دی۔ اِس سکیورٹی بل کی عوامی سطح پر خاصی مخالفت کی جا رہی تھی۔ جاپانی امور کے ماہرین نے اِس قانون سازی کو عوام مخالف اور زہریلا قرار دے رکھا تھا۔

اب ستر برس بعد جاپانی فوجی کسی غیر ملک میں تعیناتی کے ساتھ ساتھ اتحادیوں کے شانہ بشانہ جنگی کارروائیوں کا حصہ بھی بن سکیں گے۔ جاپان میں اب تک حکومت کو معمول کی ملٹری فوج اور اِس سے وابستہ دوسری سرگرمیاں جاری رکھنے کے حوالے سے آئینی قدغنوں کا سامنا تھا۔ دوسری عالمی جنگ کے بعد امریکا نے اس پابندی کو جاپانی دستور کا حصہ بنا دیا تھا۔

سکیورٹی بل کو پارلیمنٹ کے ایوانِ بالا کے 148 اراکین کی تائید سے منظوری حاصل ہوئی، نوّے ارکان نے اِس متنازعہ سکیورٹی بِل کی مخالفت میں ووٹ ڈالا۔ قوم پرست وزیراعظم شِنزو آبے کا کہنا ہے کہ یہ دستوری تبدیلی جاپان کی عسکری پالیسی کو معمول کے مطابق لانے سے متعلق ہے اور یہ خاص طور پر جارح رویے کی عکاس نہیں بلکہ جاپان کی دفاعی ضروریات کے مطابق ہے۔ اُن کے حامیوں کا بھی کہنا ہے کہ چین کی فوجی موومنٹ میں تسلسل اور شمالی کوریا کی غیر مستحکم جوہری پالیسی کے تناظر میں جاپان کو اپنے دفاع کی ازحد ضرورت ہے۔

Japan Tokio Änderung Sicherheitspolitik Shinzo Abe

جاپانی وزیراعظم شِنزو آبے

اِس قانون کی منظوری کے وقت پارلیمنٹ کے باہر ہزاروں افراد اِس کی مخالفت میں مظاہرہ کر رہے تھے۔ اِن مظاہرین نے خاص طور پر اُس وقت زور دار نعرہ بازی کی جب پارلیمانی منظوری کا اعلان کیا گیا۔ یہ لوگ دستور کو تحفظ دینے اور ’جنگ نہیں امن‘ کے مطالبات کے بھی نعروں کے علاوہ پلے کارڈز تھامے ہوئے تھے۔ آبے حکومت کے مخالفین کا کہنا تھا کہ یہ حکومتی عمل دستور اور عوامی احساسات کے منافی ہے۔ سکیورٹی بل کی منظوری کے بعد رپورٹرز سے گفتگو کرتے ہوئے جاپانی وزیراعظم شِنزو آبے نے مخالفین کے شبہات کی نفی کرتے ہوئے کہا کہ یہ قانون سازی جاپانی عوام کی زندگیوں کو محفوظ رکھنے کے لیے کی گئی ہے اور یہ جنگ سے محفوظ رکھے گی۔

منتظمین کے مطابق جمعے اور ہفتے کی درمیانی شب میں پارلیمنٹ کے سامنے ہونے والے مظاہرے میں چالیس ہزار سے زائد لوگ شریک تھے۔ دوسری جانب ٹوکیو پولیس کے مطابق کُل مظاہرین کی تعداد گیارہ ہزار کے قریب تھی۔ اِن افراد میں بے شمار بڑی عمر کے لوگ بھی شامل تھے۔ ساٹھ برس سے زائد عمر کے ایک کسان یکیکو اوگاوا کا کہنا تھا کہ وہ اِس مظاہرے میں رات بھر شریک رہنے کے لیے تیار ہے۔ بہت سارے لوگوں کا خیال ہے کہ آبے حکومت کی اِس دستوری پیش رفت کے خلاف عوامی تحریک جاری رہے گی۔