1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

آسیہ بی بی کی اپیل کی سماعت موخر، پاکستان میں متضاد ردعمل

پاکستانی سپریم کورٹ نے توہین مذہب کے جرم میں سزا پانے والی مسیحی خاتون آسیہ بی بی کی جانب سے دائر کردہ اپیل پر اپنی سماعت جمعرات کے روز اس وقت مؤخر کر دی، جب بینچ میں شامل ایک جج نے سماعت میں شمولیت سے معذوری ظاہر کر دی۔

Demonstration für Asia Bibi in Pakistan (picture alliance/dpa)

’شہدا فاؤنڈیشن‘ جس کا قیام سن 2007 میں لال مسجد آپریشن کے بعد کیا گیا تھا، نے ایک بیان میں کہا تھا کہ اگر آسیہ بی بی کو رہا کر دیا گیا تو لال مسجد حکومت کے خلاف تحریک کا گڑھ بن جائے گی۔

اس فاؤنڈیشن کے ترجمان حافظ احتشام احمد نے کہا، ’’ہمیں آسیہ بی بی کو رہا کرائے جانے والی کوششوں پر تحفظات ہیں اور ہم ہر اس شخص کو توہین مذہب کا مرتکب سمجھیں گے جو آسیہ بی بی کی رہائی کے لیے کوششیں کر رہا ہے۔‘‘ لال مسجد کے ترجمان نے یہ بھی دھمکی دی تھی کہ اگر آسیہ بی بی کو بیرون ملک بھیجنے کی کوشش کی گئی تو اس کے نتائج سنگین ہوں گے۔

آسیہ بی بی کی جانب سے اسے سنائی گئی سزائے موت کے خلاف دائر کردہ درخواست پر سماعت گزشتہ روز اسلام آباد میں سپریم کورٹ میں ہونی تھی۔  پانچ بچوں کی والدہ آسیہ بی بی کو سن 2010ء میں سزائے موت سنائی گئی تھی۔ آسیہ بی بی پاکستان میں یہ سزا پانے والی پہلی غیر مسلم خاتون ہیں۔

پاکستانی چینل جیو سے وابستہ عبدالقیوم صدیقی جو سپریم کورٹ کے مقدمات کی رپورٹنگ کا خاصا تجربہ رکھتے ہیں۔ انہوں نے ڈی ڈبلیو کو بتایا کہ گزشتہ روز کمرہء عدالت میں لال مسجد اور شہدا فاؤنڈیشن کے عہدیداروں کی قابل ذکر تعداد موجود تھی۔ اس کے علاوہ ختم نبوت فورم کے وکیل بھی موجود تھے جو کہ آسیہ بی بی کے خلاف مقدمہ لڑ رہے ہیں۔ ساتھ ہی ساتھ انسانی حقوق کے کارکن اور مقامی اور بین الاقوامی میڈیا کی بھی بڑی تعداد موجود تھی۔ 

 پاکستان جیسے قدامت پسند معاشرے میں توہین رسالت یا توہین مذہب ایک نہایت حساس معاملہ ہے اور اسی تناظر میں سپریم کورٹ کی عمارت کی حفاظت کے لیے کئی سو پولیس اہلکار تعینات کیے گئے تھے۔

Blasphemie Gesetz in Pakistan FLASH Galerie

سلمان تاثیر کو ان ے ہی گارڈ نے آسیہ بی بی کی حمایت کرنے کی وجہ سے قتل کر دیا تھا

خبر رساں اداروں کے مطابق عدالتی سماعت کے موقع پر کسی ممکنہ تشدد کے واقعات  پیش آنے کے خدشات اس وقت کم ہو گئے، جب اس اپیل کی سماعت کے لیے بنائے گئے تین رکنی بینچ میں شامل جج اقبال حمید الرحمان نے مقدمے کی کارروائی میں اپنے شریک ہونے سے معذوری ظاہر کر دی۔ اے ایف پی کے رپورٹر کا کہنا ہے کہ جج اقبال حمید الرحمان نے عدالت کو بتایا،’’ میں اسی بینچ کا حصہ تھا جو سلمان تاثیر کے کیس کی سماعت کر رہا تھا، اور آسیہ بی بی کا کیس اس سے منسلک ہے۔‘‘  

عبدالقیوم صدیقی کا کہنا ہے کہ اپیل کی سماعت موخر کیے جانے کے بعد عام تاثر یہی ہے کہ اب اس کیس میں کافی عرصے تک کوئی پیش رفت نہیں گی۔

سلمان تاثیر پاکستان کے صوبے پنجاب کے سابق گورنر تھے جنھیں آسیہ بی بی کی حمایت کرنے پر ان کے اپنے ہی گارڈ ممتاز قادری نے سن 2011 میں قتل کر دیا تھا۔ ممتاز قادری کو سن 2016 کے آغاز میں پھانسی کی سزا دی گئی تھی۔ اس اقدام کو ملک کے روشن خیال طبقے نے کافی سراہا تھا لیکن ممتاز قادری کی پھانسی کے بعد اس کے حامی افراد بڑی تعداد میں احتجاجا سڑکوں پر نکل آئے تھے۔

اس کیس  پر گہری نظر رکھنے والے مبصرین کی رائے میں یہ کیس پاکستان کے لیے ایک جنگ کی حیثیت رکھتا ہے، ایک ایسی جنگ جس میں انسانی حقوق اور شدت پسندوں کا آمنا سامنا ہے۔ نیوز ایجنسی اے ایف پی کے مطابق لال مسسجد کے ترجمان نے دھمکی آمیز پیغام میں کہا تھا، ’’اگر آسیہ بی بی کو رہا کیا گیا تو ہر کوئی ممتاز قادری بن جائے گا، بین الاقوامی طاقتیں یاد رکھیں کہ وہ اپنے ناپاک مقاصد میں کامیاب نہیں ہوں گی۔‘‘

Familie von Asia Bibi Pakistan (picture alliance/dpa)

آسیہ بی بی کے شوہر اپنی بیٹیوں کے ہمراہ

آسیہ بی بی کے وکیل سیف الملکوک نے لال مسجد کی دھمکی کو اہم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ امید کرتے ہیں کہ حکومت اس دھمکی کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے ان کو سکیورٹی فراہم کرے گی۔

انسانی حقوق کے وکیل شہزاد اکبر نے اے ایف پی کو بتایا،’’ اقلیتوں، انسانی حقوق اور پاکستان میں توہین مذہب کے قانون  کے حوالے سے اس کیس کے نتائج بہت معانی رکھیں گے۔‘‘

پاکستان کے انسانی حقوق کمیشن کی سربراہ زہرہ یوسف، آسیہ بی بی کی اپیل کی سماعت مؤخر ہونے کو انتہائی افسوس ناک  قرار دے رہی ہیں۔ انہوں نے اے ایف پی کو بتایا، ’’یہ ایک بہت حساس کیس ہے، میرا خیال ہے کہ جج سمجھ گئے ہیں کہ اگر انہوں نے آسیہ بی بی کی رہائی کا فیصلہ سنایا تو وہ اپنی زندگیوں کو خطرے میں ڈال دیں گے۔‘‘

اس کیس کے پراسیکیورٹر غلام مصطفیٰ چوہدری کا کہنا ہے، ’’اس کیس کا فیصلہ انصاف کی بنیاد پر ہونا چاہیے نہ کہ غیر ملکی دباؤ پر، آسیہ بی بی ایک نہیں بلکہ دو عدالتوں سے مجرم ثابت ہو چکی ہیں۔‘‘