1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

آسٹریلیا، نئے مجوزہ سخت قوانین میں شہریت کا حصول مشکل تر

آسٹریلوی وزیر اعظم میلکم ٹرن بل نے اعلان کیا ہے کہ تارکینِ وطن کے لیے آسٹریلیا کے ویزے اور شہریت کے حصول کا عمل مزید مشکل بنایا جائے گا۔ درخواست دہندگان کو اعلیٰ درجے کی انگریزی زبان جاننے کا ٹسٹ بھی پاس کرنا ہو گا۔

Australien Malcolm Turnbull von der Liberalen Partei (Reuters/D. Munoz)

آسٹریلوی وزیر اعظم نے اعلان کیا ہے کہ تارکینِ وطن کے لیے آسٹریلیا کے ویزے اور شہریت کے حصول کا عمل مزید مشکل بنایا جائے گا

ٹرن بُل نے نئے درخواست دہندگان کے لیے ویزا حاصل کرنے کے لوازمات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ایک مضبوط آسٹریلیا کے لیے شہریت کے حصول کے طریقہٴ کار کو بھی سخت بنانا ہو گا۔ اُن کا کہنا تھا کہ آسٹریلوی شہریت حاصل کرنے کے خواہشمند افراد کو اعلیٰ درجے کی انگریزی زبان کا ٹیسٹ پاس کرنا ہو گا۔ انگریزی زبان کے مجوزہ ٹیسٹ میں انگریزی پڑھنا، لکھنا، بولنا اور سننا شامل ہیں۔ درخواست دہندگان کی دیگر سماجی معاملات مثلاﹰﹰ خواتین پر گھریلو تشدد کا معاملے کے حوالے سے بھی جانچ پڑتال کی جائے گی۔

 یہ بھی دیکھا جائے گا کہ آیا کوئی درخواست دہندہ شوہر کے ہاتھوں بیوی کے پیٹے جانے کو درست سمجھتا ہے۔ شہریت کے حصول کے لیے مرتب کیے جانے والے ٹسٹ میں کم عمری میں کی جانے والی شادیوں اور خواتین سے متعلق انتہائی حساس موضوعات پر بھی سوالات کیے جائیں گے۔ ٹرن بُل کا کہنا تھا کہ ایسے سوالات آسٹریلوی اقدار کو مضبوط بنانے کے لیے بہت ضروری ہیں۔

شہریت کے نئے قوانین کے تحت درخواست گزاروں کا آسٹریلیا میں مستقل رہائشی کی حیثیت سے کم از کم چار سال قیام لازمی ہو گا۔ فی الحال یہ مدت ایک سال ہے۔ آسٹریلیا تارکین وطن کے حوالے سے عالمی درجہ بندی میں اُن ممالک میں شامل ہے، جہاں کا ترک وطن کرنے والے افراد نے سب سے زیادہ رُخ کیا ہے۔

 

DW.COM