1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

آسٹریلوی عدالت نے پناہ گزینوں کی ملائشیا منتقلی روک دی

آسٹریلیا کی حکومت کا ملائشیا کے ساتھ پناہ گزینوں کے تبادلے کا حکومتی معاملہ اعلیٰ عدالت نے غیر قانونی قرار دے دیا ہے۔ اس فیصلے سے پناہ حاصل کرنے والوں کے داخلے کے خلاف جاری حکومتی کوششوں کو ٹھیس پہنچی ہے۔

default

آسٹریلیا میں ریفیوجی حراستی مرکز

آسٹریلیا کے ہائی کورٹ نے اپنے ایک سابقہ حکم امتناعی کو فیصلے میں تبدیل کرتے ہوئے آٹھ سو پناہ گزینوں کی ملائشیا منتقلی کو روک دیا ہے۔ حکومتوں کی سطح پر جاری اس معاملے کو غیر قانونی قرار دے دیا گیا ہے۔ حکومت ان غیر قانونی پناہ گزینوں کو ملائشیا کے حوالے کر کے ان کے بجائے چار ہزار رجسٹرڈ مہاجرین کو لانے کا ارادہ رکھتی تھی۔ ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف حکومت کو اپیل کا حق نہیں دیا گیا ہے۔

Chen Yonglin Asyl in Australien

آسٹریلیا میں پناہ گزینوں کا ایک مظاہرے کے شرکاء

آسٹریلیا کی اعلیٰ ترین دستوری عدالت کے اکثریتی فیصلے میں ججوں کا کہنا ہے کہ ملائشیا کے قانون میں پناہ گزینوں کے لیے مناسب حفاظت کا ذکر موجود نہیں ہے۔ عدالت کے سات میں سے ایک جج نے اس فیصلے کی مخالفت میں نوٹ لکھا۔

عدالت نے امیگریشن کے وزیر کرس براؤن کے حوالے سے کہا کہ ان کے پاس کوئی قانونی اختیار نہیں کہ وہ آسٹریلیا سے کسی پناہ گزین کو اس کے اسٹیٹس کے تعین سےقبل باہر نکال سکیں۔

کرس براؤن نے اعلیٰ ترین عدالت کے فیصلے پر مایوسی کا اظہار کیا ہے۔ براؤن کے مطابق اس فیصلے سے ان حکومتی کوششوں کو ٹھیس پہنچی ہے جو انسانوں کی اسمگلنگ کی روک تھام کے لیے کی جا رہی ہیں۔ دوسری جانب پناہ گزینوں کے حامی وکلاء اور سرگرم تنظیموں نے عدالت کے فیصلے کو سراہا ہے۔ آسٹریلیا کے بحر ہند میں واقع کرسمس آئلینڈ میں پناہ گزینوں کے لیے قائم حراستی مرکز میں موجود افراد نے بھی عدالتی فیصلے کی تالیاں بجا کر پذیرائی کی۔

Protestaktion von Flüchtlingen in Nauru 2003

آسٹریلیا میں ایک پناہ گزین بھرک ہڑتال کے دوران

آسٹریلوی حکومت کے پناہ گزینوں کے تبادلے کی پالیسی کے خلاف سولہ افراد نے دستوری عدالت سے رجوع کرتے ہوئے یہ مؤقف اختیار کیا کہ ملائشیا اقوام متحدہ کے ریفیوجیز سے متعلق بین الاقوامی معاہدے کا دستخط کنندہ نہیں ہے اور اس مناسبت سے یہ ڈیل غیر قانونی ہے۔ اپیل میں وکلاء نے یہ مؤقف بھی اختیار کیا کہ ملائشیا میں پناہ گزینوں کے لیے مناسب قانونی حفاظتی سہولتوں کا فقدان ہے۔ حکومتی وکلاء نے عدالت کو یقین دلانے کی ضرور کوشش کی کہ ملائشیا میں پناہ گزینوں کے لیے مناسب انتظامات موجود ہیں۔

آسٹریلوی حکومت نے غیر قانونی تارکین وطن کے داخلے کو روکنے  کے سلسلے میں پچیس جولائی سن دو ہزار گیارہ سے ملائشیا میں ایک سینٹر قائم کردیا ہے اور وہاں پر رجسٹریشن کے بعد ہی کینبرا حکومت ان کے آسٹریلیا میں داخلے کی مناسبت سے کیس پر غور کرتی ہے اور حتمی فیصلے کے بعد انہیں آسٹریلیا داخل ہونے کی اجازت دیتی ہے۔

رپورٹ:  عابد حسین

ادارت:  ندیم گِل

DW.COM