1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

آسٹریا کے الیکشن میں انتہائی دائیں بازو کے امیدوار کی ’شکست‘

آسٹریا کے صدارتی انتخابات میں فریڈم پارٹی نے اپنے امیدوار نوربرٹ ہوفر کی شکست تسلیم کر لی ہے۔ تازہ ترین جائزوں کے مطابق ہوفر گرین پارٹی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار اليگزينڈر فان ڈیئر بيلن سے کافی پیچھے ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے آسٹرین میڈیا کے حوالے سے بتایا ہے کہ آسٹریا میں چار دسمبر بروز اتوار منعقد ہوئے صدارتی انتخابات کے ایگزٹ جائزوں کے مطابق گرین پارٹی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار اليگزينڈر فان ڈیئر بيلن اپنے حریف سیاستدان نوربرٹ ہوفر پر واضح برتری حاصل کیے ہوئے ہیں۔

آسٹرین صدارتی الیکشن: بائیں بازو کا مقابلہ عوامیت پسندی سے

یورپ میں دائیں بازو کی طرف جھکاؤ کی وجہ عالمگیریت سے خوف

آسٹریا میں صدارتی انتخابات کے نتائج منسوخ

ان جائزوں کے مطابق بہتر سالہ فان ڈيئر بيلن نے 53.6 فیصد ووٹروں کی حمایت حاصل کر لی ہے جبکہ مہاجرین مخالف سیاستدان ہوفر پر 46.4 فیصد ووٹروں نے اعتماد کا اظہار کیا۔ اس الیکشن کے حتمی نتائج کل پیر کے روز متوقع ہیں۔ تاہم ابتدائی جائزوں سے واضح ہوتا ہے کہ فان ڈيئر بيلن یہ الیکشن تقریباﹰ یقینی طور پر جیت جائیں گے۔

انہی جائزوں کے بعد فریڈم پارٹی نے اس الیکشن میں اپنی شکست بھی تسلیم کر لی ہے۔ فریڈم پارٹی کے اعلیٰ عہدیدار ہیربرٹ کِکّل نے اے ایف پی سے گفتگو میں کہا، ’’میں اليگزينڈر فان ڈيئر بيلن کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔‘‘

آسٹریا میں مئی ميں منعقدہ اليکشن ميں دائيں بازو کی فريڈم پارٹی کے نوربرٹ ہوفر آزاد اميدوار اليگزينڈر فان ڈيئر بيلن سے اکتیس ہزار ووٹوں کے معمولی فرق سے ہار گئے تھے۔ تاہم انتظامی باضابطگیوں کے باعث اس الیکشن کے نتائج منسوخ کر دیے گئے تھے اور نئے الیکشن کرانے کا اعلان کر دیا گیا تھا۔

Österreich Präsidentschaftswahlen Alexander Van der Bellen mit Frau (Reuters/L. Foeger)

پول جائزوں کے مطابق بہتر سالہ فان ڈيئر بيلن نے 53.6 فیصد ووٹروں کی حمایت حاصل کر لی ہے

آسٹریا کے اس الیکشن میں اینٹی اسٹیبلشمنٹ ہوفر کی شکست کے باعث یورپی یونین کے رہنماؤں کو اطمینان ہو جائے گا کیونکہ بریگزٹ اور امریکا میں ری پبلکن سیاستدان ڈونلڈ ٹرمپ کی کامیابی کے بعد ایسے اندازے لگائے جا رہے تھے کہ یورپ میں بھی عوامیت پسند سیاستدان کامیابیاں سمیٹ سکتے ہیں۔

ہوفر نے کہا تھا کہ اگر وہ صدر منتخب کر لیے گئے تو وہ روس کے ساتھ تعلقات میں بہتری لاتے ہوئے یورپی یونین کی طاقت کو چیلنج کرنے کی کوشش کریں گے۔

کئی مبصرین نے خدشات ظاہر کیے تھے کہ اگر آسٹریا میں ہوفر کامیاب ہوئے تو اس کا اثر دیگر یورپی ممالک کی سیاست پر بھی پڑے گا اور جرمنی، فرانس اور ہالینڈ میں ہونے والے انتخابات میں بھی عوام دائیں بازو کے عوامیت پسند سیاستدانوں کی طرف مائل ہو جائیں گے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic

ملتے جلتے مندرجات