1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

آسٹریا اور سلوواکیا میں سرحدی نگرانی کا نفاذ

یورپی یونین کے پاسپورٹ فری شینگن زون میں جرمنی کے حیران کن فیصلے کے بعد آسٹریا اور سلوواکیا نے بھی بارڈر کنٹرول کے نفاذ کا اعلان کر دیا ہے، جب کہ کسی’خطرے‘ کی صورت میں پولینڈ نے بھی ایسا کرنے کا عندیہ دے دیا ہے۔

یورپی یونین کے پاسپورٹ فری شینگن زون کے ممالک میں کسی بھی ویزے اور چیکنگ کے بغیر سفر کیا جا سکتا ہے لیکن تارکین وطن کی بڑھتی ہوئی تعداد کے بعد مختلف ملکوں نے اپنی سرحدیں دوبارہ کنٹرول کرنے کے لیے اقدامات شروع کر دیے ہیں۔ گزشتہ روز جرمنی نے کہا تھا کہ لگائے گئے گزشتہ اندازوں کے برعکس اسے رواں برس دس لاکھ سے زائد تارکین وطن کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ اس کے ساتھ ہی جرمنی کی طرف سے یورپ کے وسط میں سرحدی نگرانی کرنے کا اعلان کر دیا گیا تھا۔ جرمنی کے اس اعلان کے بعد پیر کی شام یورپی یونین کے وزرائے داخلہ نے برسلز میں ہنگامی اجلاس طلب کر لیا ہے۔

اس اجلاس میں شرکت سے پہلے آسٹریا کی وزیر داخلہ یوحانا مِکل لائٹنر کا ویانا میں کہنا تھا، ’’ہم ویسا ہی کریں گے جیسا جرمنی نے کیا ہے، اور ہم بھی عارضی طور پر سرحدیوں کی نگرانی کریں گے۔‘‘

دریں اثناء اقوام متحدہ کی ایجنسی برائے مہاجرین نے خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر یورپی یونین اپنی سرحدی پالیسیوں سے متعلق کسی الجھن کا شکار ہوتی ہے تو اس کا اثر ان تارکین وطن پر پڑے گا، جو پہلے ہی خطرناک اور انتہائی کٹھن راستے عبور کر کے یورپ تک پہنچے ہیں۔ اس ایجنسی کا کہنا تھا کہ تارکین وطن ’قانونی پیچیدگیوں‘ میں الجھ کر رہ جائیں گے۔

اقوام متحدہ نے یہ بھی کہا ہے کہ ہنگری نے سربیا سے داخل ہونے والے تارکین وطن کی مؤثر طریقے سے رجسٹریشن کا عمل بند کر دیا ہے اور تارکین وطن کو ٹرینوں کے ذریعے سیدھا آسٹریا کی سرحد تک پہنچایا جا رہا ہے۔ تجزیہ کاروں کے مطابق لگتا یوں ہے کہ ان نئے اقدامات کے بعد یورپی یونین سرحدی پالیساں خطرے میں پڑ گئی ہیں اور ان میں کوئی تبدیلی بھی ہو سکتی ہے۔

گزشتہ روز جرمنی کے وزیر داخلہ تھوماس ڈے میزیئر کا کہنا تھا کہ تارکین وطن کو سرحد عبور کرنے سے روکنے کا مقصد ایک منظم عمل کی طرف واپس آنا ہے اور تارکین وطن کو بھی سمجھنا چاہیے کہ وہ خود فیصلہ نہیں کر سکتے کہ انہیں کس ملک میں سیاسی پناہ لینا ہے۔ دوسری جانب پولینڈ نے بھی اعلان کر دیا ہے کہ کسی بھی ’خطرے‘ کی صورت میں وہ اپنی سرحدیں کنٹرول کرنے کا عمل شروع کر سکتا ہے۔