1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

آج کا جرمن معاشرہ غير ملکيوں کے ليے کيسا ہے؟

ماہرين کا ماننا ہے کہ جرمنی ميں سرگرم اسلام مخالف تنظيم اپنے حد تک پہنچ چکی ہے اور اپنے گڑھ مانے جانے والے شہر ڈريسڈن کے علاوہ اس تنظيم کے مزيد پھيلنے کے امکانات کم ہی ہيں۔

رواں سال نومبر ميں پيگيڈا کی ايک ريلی ميں تقريباً دس ہزار افراد نے شرکت کی تھی ليکن شايد حاميوں کا اس سے بڑا مجمع اکٹھا کرنا اس تنظيم کے بس سے باہر کی بات ہے۔ ايسا ماننا ہے رينے يان کا، جو پيگيڈا کے شريک بانی تھے تاہم سال رواں کے آغاز پر انہوں نے اپنے راستے عليحدہ کر ليے۔ تاہم يان کا يہ بھی کہنا ہے کہ تنظيم بالکل ہی غائب بھی نہيں ہو گی۔

يورپ کو دوسری عالمی جنگ کے بعد ان دنوں تارکين وطن کے بد ترين بحران کا سامنا ہے۔ تقريباً ايک ملين پناہ گزين تو جرمنی پہنچ چکے ہيں۔ ليکن حيران کن بات يہ ہے کہ پناہ گزينوں سے عداوت کے سبب سب سے زيادہ فائدہ پيگيڈا کو نہيں بلکہ دائيں بازو کی جماعت ’آلٹرنيٹيو فار ڈوئچ لينڈ‘ يا جرمنی کے ليے متبادل کو پہنچا۔ يہ جماعت مہاجرين مخالف ہے اور ان دنوں رائے عامہ کے جائزوں کے مطابق اسے چھ تا دس فيصد حمايت حاصل ہے۔

ستمبر ميں پيگيڈا کے رہنما لٹس باخ مان نے اپنے حاميوں کی تعداد بڑھانے کے ليے ايک سياسی جماعت بنانے کے بارے ميں بھی ذکر کيا تھا۔ سياسی تجزيہ نگاروں ويرنر جے پاٹسيلٹ اور ہانس فورلائنڈر کے خيال ميں ايسا ممکن ہے کہ وہ اپنی اس بات کو پايہ تکميل تک پہنچائيں۔ رينے يان کا کہنا ہے کہ باخ مان دوبارہ اس بارے ميں ذکر اسی وقت کريں گے، جب ان کی ريليوں ميں شرکاء کی تعداد کم ہوتی ہے۔

پيگيڈا کی کہانی بہت سے جرمن شہريوں کے ليے اس بات کا ثبوت ہے کہ غير ملکوں اور مہاجرين کے خلاف ريلياں يا نعرے بازی مشرقی جرمنی ہی کی خصوصيت ہيں۔ نسل پرستی کے خلاف کام کرنے والی تنظيم اماڈيو انٹونيو فاؤنڈيشن سے منسلک آنيٹے کاہانے کہتی ہيں، ’’آج کل کوئی غير ملکی بغير سوچے سمجھے مشرق کی طرف نہيں جاتا۔ اسے معلوم ہوتا ہے کہ يہ اس کے ليے خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔‘‘ وہ ايسے تاثرات کا تعلق غير ملکيوں سے نفرت کے سبب چوبيس برس قبل ہونے والے فسادات سے جوڑتی ہيں، جب ادارے آج کے مقابلے ميں کمزور تھے اور کميونسٹ نظام اپنے اختتام کو پہنچا تھا۔ ’’مہاجرين اور مہمان ملازمين اب پچھلے پچاس برسوں سے مغربی جرمنی ميں رہ رہے ہيں جبکہ فسادات کرنے والوں نے مشرق کا رخ کر ليا۔‘‘

اس کے برعکس مشرقی حصے کی قيادت کا ماننا ہے کہ پچھلی دو دہائيوں ميں مشرقی جرمنی کافی حد تک مغربی جرمنی ہی کی طرح ہو گيا ہے، جہاں اقليتوں کو معاشرے کا حصہ بننے ميں کوئی دشواری پيش نہيں آتی۔ ڈوئزبرگ ايسن يونيورسٹی ميں پوليٹيکل سائنس کے پروفيسر کارل روڈولف کورٹے کے مطابق مجموعی طور پر جرمن معاشرے ميں برداشت کا عنصر کافی زيادہ پايا جاتا ہے اور اکثريتی شہری ’خوف کی سياست‘ کی مخالفت کرتے ہيں۔