1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

آئی کلاؤڈ کا اجراء، تنقید بھی تعریف بھی

ایپل کمپنی نے اپنی نئی ڈیوائس ’آئی کلاؤڈ‘ کو باقاعدہ لانچ کر دیا ہے۔ آئی کلاؤڈ کے ذریعے میوزک اسٹریمنگ اور آن لائن ڈیٹا محفوظ کیا جا سکتا ہے۔

default

کلاؤڈ کمپیوٹنگ نسبتاً ایک نئی ٹیکنالوجی ہے اور اس کا مطلب دفتری اور نجی ڈیٹا کی آن لائن اسٹوریج ہے۔ ایپل کی جانب سے کمپنی کے چیف ایگزیکٹیو اسٹیو جابس نے سان فرانسسکو میں ورلڈ وائڈ ڈیویلپرزکانفرنس کے دوران تقریباً پانچ ہزار افراد کی موجودگی میں اپنی نئی دریافت ’آئی کلاؤڈ‘ کو متعارف کرایا۔ جابس کے مطابق آئی کلاؤڈ موسمِ خزاں سے پچیس ڈالر سالانہ کی قیمت میں دستیاب ہو گا۔

Steve Jobs auf der jährlichen Entwickler-Konferenz in San Francisco

ایپل کے چیف ایگزیکٹیو اسٹیو جابس نے اپنی نئی دریافت ’آئی کلاؤڈ‘ کو متعارف کرایا

آئی ٹی کے شعبے کے ایک ماہر جان سی ووراک کا کہنا تھا کہ اپیل نے ایک بیکار تقریب کے لیے اتنے بڑے مجمع کو اکٹھا کیا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ انہیں یہ امید تھی کہ یہاں کچھ انقلابی شے دیکھنے کو ملے گی، ’’کیا کوئی مجھے یہ سمجھا سکتا ہے کہ آئی کلاؤڈ میں نئی کیا بات ہے؟‘‘۔ ماہرین کے مطابق اپیل نے نہ تو ڈیجیٹل میوزک پلیئر ایجاد کیے ہیں، نہ ہی اسمارٹ فون اور نہ ہی ٹیبلٹ کمپیوٹر لیکن پھر بھی یہ کمپنی ان تمام شعبوں میں انتہائی کامیاب ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ اپیل نے اپنی مصنوعات کی تیاری میں صارفین کی دلچسپی کو مد نظر رکھا ہے۔

آئی کلاؤڈ کے ذریعے انٹرنیٹ صارفین کسی بھی ایپل ڈیوائس سے میوزک حاصل کر کے اسے چلا سکتے ہیں۔ آئی کلاؤڈ کمپیوٹنگ میں ڈیٹا کو سافٹ ویئر سرورز پر اسٹور کیا جاتا ہے اور اس ایپل ڈیوائس تک انٹرنیٹ کے ذریعے رسائی حاصل کی جا سکتی ہے۔ اس سروس کے ذریعے آئی ٹیونز میچ ہارڈ ڈرائیوز کو اسکین کرتا ہے اور گانوں کو آئی کلاؤڈ پر پیش کر دیتا ہے۔ اس کے برخلاف گوگل اور ایمازون کے کلاؤڈ پروگرامز کے صارفین کو ہر گانا خود اپ لوڈ کرنا پڑتا ہے۔ اسی وجہ سےکمپنی کو امید ہے کہ آئی ٹیونز کے 200 ملین صارفین بھی اس سہولت سے فائدہ اٹھا سکیں گے۔

Logo Apple Computer

ایپل کا کلاؤڈ ٹیکنالوجی کی طرف رجوع کرنے کا مقصد اپنی حریف کمپنیوں گوگل اور ایمازون پر سبقت لے جانے کی کوشش قرار دیا جا رہا ہے

جی پی مورگن ریسرچ انسٹیٹیوٹ سے وابستہ مارک موسکاوٹز کے بقول آئی کلاؤڈ تھوڑی تاخیر سے متعارف کرایا جا رہا ہے لیکن یہ اپنے مقابلے کی دیگر مصنوعات سے بہت بہتر ہے۔ ایپل کا کلاؤڈ ٹیکنالوجی کی طرف رجوع کرنے کا مقصد اپنی حریف کمپنیوں گوگل اور ایمازون پر سبقت لے جانے کی کوشش قرار دیا جا رہا ہے۔ گوگل اور ایمازون پہلے ہی کلاؤڈ ٹیکنالوجی کا اجراء کر چکی ہیں۔ ماہرین کہتے ہیں کہ آیا ’آئی کلاؤڈ‘ مارکیٹ میں ایپل کی دیگر مصنوعات کی طرح ہی مقبولیت حاصل کر لے گا، یہ تو وقت ہی بتائے گا۔

رپورٹ: عدنان اسحاق

ادارت : امجد علی