1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

آئی ایس سے تجارتی تعلق ثابت کریں استعفیٰ دے دوں گا، ایردوآن

ترک صدر رجب طیب ایردآن نے پیر کے روز کہا ہے کہ اگر روسی صدر ولادیمیر پوٹن کے یہ الزامات ثابت ہو گئے کہ ترکی اسلامک اسٹیٹ سے تیل کی خریدری میں ملوث ہے، تو وہ استعفیٰ دے دیں گے۔

ترک صدر ایردوآن نے کہا کہ دہشت گرد گروہ اسلامک اسٹیٹ سے تیل کی خریداری میں ترکی ملوث نہیں۔ ایردوآن کا کہنا تھا، ’’میں یہاں ایک بات بہت زور دے کر کہنا چاہتا ہوں۔ اگر ایسا کوئی بھی الزام ثابت ہو گیا، تو ہماری قوم کی عظمت مجھ سے مطالبہ کرے گی کہ میں عہدہ صدارت پر نہ رہوں۔‘‘

ترک خبر رساں ادارے انطولیہ کے مطابق صدر ایروآن نے یہ بات پیرس میں عالمی ماحولیاتی کانفرنس کے موقع پر ایک حاشیے میں کہی۔ اس اجلاس میں روسی صدر پوٹن بھی شریک ہیں، تاہم انہوں نے پیرس آنے سے قبل یہ کہہ کر ترک صدر سے ملاقات مسترد کر دی تھی، کہ جب تک ترکی روسی جنگی طیارہ مار گرانے پر معذرت نہیں کرتا، وہ ایردوآن سے نہیں ملیں گے۔

ایردوآن نے اپنے بیان میں صدر پوٹن کو چیلنج کرتے ہوئے کہا کہ اگر ترکی پر ان کا یہ الزام درست ثابت نہ ہوا، ’تو کیا وہ بھی استعفیٰ دیں گے‘۔

Russland Wladimir Putin

پوٹن ترکی سے مطالبہ کر چکے ہیں کہ وہ واقعے پر معذرت کرے

پیر کے روز روسی صدر پوٹن نے الزام عائد کیا تھا کہ ترکی نے روسی جنگی طیارے کو گزشتہ ہفتے اس لیے مار گرایا، تا کہ وہ دہشت گرد گروہ اسلامک اسٹیٹ سے تیل کی سپلائی کا سلسلہ جاری رکھ سکے۔

ایردوآن نے اس الزام کے جواب میں کہا، ’’چلیے ہم برداشت سے کام لیں اور جذباتی نہ ہو جائیں۔‘‘ انہوں نے کہا کہ ترکی تیل اور گیس کے حوالے سے تمام درآمدات کے لیے قانونی اور جائز طریقے استعمال کرتا ہے۔

انہوں نے واضح الفاظ میں کہا، ’’ہم دھوکے باز نہیں کہ دہشت گرد گروہوں سے اس طرز کی تجارت کریں۔ یہ بات سب کو معلوم ہونا چاہیے۔‘‘

یہ بات اہم ہے کہ گزشتہ ہفتے ترکی کے ہاتھوں روسی طیارے کی تباہی پر اپنے ردعمل میں صدر پوٹن نے الزام عائد کیا تھا کہ ترکی ’دہشت گردوں کی معاونت‘ کر رہا ہے اور اس کی وجہ دہشت گرد گروہ اسلامک اسٹیٹ کے زیرقبضہ علاقوں سے تیل کی رسائی کو تحفظ دینا ہے۔