1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

آئینی اصلاحات، کرغزستان میں ریفرینڈم کی تیاری

کرغزستان میں نئے آئین کی عوامی منظوری کے لئے ریفرنڈم کی تیاریاں مکمل کر لی گئی ہیں۔ حالیہ نسلی فسادات کے بعد اس بات کا امکان ہے کہ ووٹنگ کی شرح کم ہو سکتی ہے ۔

default

اس حوالے سے بے شمار خدشات کے باوجود کرغزستان کی عبوری حکومت نے کہا ہے کہ یہ ریفرنڈم اپنے مقررہ دن یعنی اتوار کو ہی منعقد کیا جائے گا۔

اس ریفرنڈم کی تیاری کے سلسلے میں حکام نے شہراوش کا کرفیو ختم کر دیا ہے۔ کرغزستان میں حالیہ نسلی ہنگاموں کا آغاز اسی جنوبی شہرسے ہوا تھا۔ ان ہنگاموں میں غیر مصدقہ اطلاعات کے مطابق کم ازکم دوہزار افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

Rosa Otunbayeva Präsidentin Kirgistan Kirgisien Kirgisistan Kyrgyzstan

کرغزستان کی عبوری حکومت کی سربراہ

اپریل میں کرغز صدرکُرمان بیک باقییف کو اقتدار سے ہٹانے کے بعد وجود میں آنے والی عبوری حکومت نے وعدہ کیا تھا کہ وہ ملکی آئین میں اصلاحات لائی گی اور یہ ریفرنڈم اسی سلسلے کی ایک اہم کڑی ہے۔ عبوری حکومت کا کہنا ہے کہ کرغز اور ازبک نسل کے مابین حالیہ نسلی فسادات اصلاحات کے اس عمل کو متاثر کرنے کے لئے کئے گئے۔

اوش کے کئی رہائشیوں کا کہنا ہے کہ وہ اس ریفرنڈم میں ضرور حصہ لیں گے جبکہ کچھ کا کہنا ہے کہ عبوری حکومت کی طرف سے اس صورتحال میں ریفرنڈم کا انعقاد کوئی اچھا فیصلہ نہیں ہے۔ اوش کے ایک رہائشی نے کہا: ’’میں اس ریفرنڈم میں ضرور ووٹ ڈالوں گا تا کہ یہاں صورتحال بہتر ہو اور مستقبل میں ایسا کوئی واقعہ پیش نہ آئے۔‘‘ جبکہ ان کے ساتھی ووٹر نے کہا: ’’میں ووٹ نہیں ڈالوں گا، میں اور میرا شہر اس ریفرنڈم کے لئے تیار نہیں۔‘‘

نئے آئین کے تحت صدر کے اختیارات کم کرنے اور ملک کو پارلیمانی جمہوریہ بنانے کی تجویز دی گئی ہے۔ اگراس ریفرنڈم میں عوام نئے آئین کے حق میں ووٹ دیتے ہیں تو کرغزستان وہ پہلا وسطی ایشیائی ملک بن جائے گا، جہاں پارلیمانی حکومت وجود میں آئے گی۔ اسی ریفرنڈم میں تجویز کیا گیا ہے کہ ستمبر میں پارلیمانی انتخابات منعقد کروائے جائیں گے تا کہ پارلیمانی حکومت کا قیام جلد ازجلد وجود میں لایا جا سکے۔

Kirgisistan Kirgisien Khirgistan Kyrgyzstan

حالیہ فسادات میں دو ہزار افراد کی ہلاکتوں کی اطلاعات ہیں

دوسری طرف انسانی حقوق کے ادارے ہیومن رائٹس واچ نے خبردار کیا ہے کہ اس وقت کرغزستان میں ریفرنڈم موجودہ صورتحال کو مزید کشیدہ بنا سکتا ہے۔ ادارے کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ عبوری حکومت نے ابھی تک یہ واضح نہیں کیا کہ حالیہ فسادات میں بے گھر ہونے والے افراد، جو اپنی شناختی دستاویزات بھی کھو چکے ہیں، کس طرح اس ریفرنڈم میں حصہ لیں گے۔

دریں اثناء یورپ کی سلامتی و تعاون کی تنظیم OSCE نے بھی اعلان کر دیا ہے کہ اس مخصوص صورتحال میں وہ اپنے معائنہ کار کرغزستان روانہ نہیں کرے گی۔ اس ریفرنڈم کی غیر جانبدارنہ نگرانی کے لئے OSCE نے تین سو ماہرین پر مشتمل اپنی ایک ٹیم کرغزستان روانہ کرنی تھی۔

اس صورتحال میں امریکہ نے امید ظاہر کی ہے کہ کرغزستان میں یہ ریفرنڈم شفاف اورغیرجانبدارنہ طریقے سے کرایا جائے گا۔ اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے ترجمان فلپ کرؤلے نے کہا ہے کہ یہ ریفرنڈم کرغزستان میں جمہوری حکومت کے قیام کے لئے ایک اہم قدم ثابت ہوگا۔

رپورٹ :عاطف بلوچ

ادارت: عاطف توقیر

DW.COM